بے چینی اوراضطراب پر قابو پانے کے6 طریقے

ہمت نہ ہارو، آگے بڑھو، مسکراؤ
ہمت نہ ہارو، آگے بڑھو، مسکراؤ

کسی آنے والے خطرے کو سوچ کر پریشان ہو جانا یا کسی ایسے واقعے سے ڈر کر بے چین ہو جانا جو ابھی حقیقت کا روپ دھار ہی نہیں سکا بعض لوگوں کو بے چینی اور اضطراب کا شکار کر دیتا ہے۔ کچھ سمجھ نہیں آتا کیا کریں اور کیا نہ کریں؟ وہ لمحات بدمزہ اور الجھن کا شکار ہو جاتے ہیں۔ ایسے حالات ہر کسی کے ساتھ پیش آتے ہیں۔ لیکن کی وجہ زیادہ تر فرضی ہوتی ہے۔ یعنی ہم خود ہی فرض کر لیتے ہیں کہ ایسا ہو گا ویسا جبکہ زیادہ تر ویسا نہیں ہوتا جیسا ہم سوچ رہے ہوتے ہیں کہ ایسا ہو گا۔  ضروری نہیں کہ بے چینی اور اضطراب کسی بہت بڑے واقعے کی وجہ سے ہم پر مسلط ہو جائے۔ یہ روز مرہ کی معمولی باتوں سے بھی ہمیں گھیرے میں لے لیتا ہے۔ جیسے گاڑی کی چابیاں نہیں مل رہیں۔ رات میں کتاب سرہانے رکھی تھی نجانے کہاں چلی گئی وغیرہ وغیرہ۔

بہت ممکن ہوتا ہے کہ ہم اپنا سکون چین اسی اضطراب کے ہاتھوں گنوا بیٹھیں۔ لیکن ہم آپ کو چند ایسی سادہ تراکیب بتائیں گے جن کی مدد سے آپ اپنی بے چینی (Anxiety) پر قابو پر سکتے ہیں۔

1- ٹھہرئیے، مسکرائیے، قہقہ لگائیے

آپ جو بھی کر رہے ہوں اسے چند لمحوں کے لیے روک دیں۔ جی ہاں تھوڑا وقفہ لیں اور مسکرا دیں۔ سائنس نے ثابت کیا ہے کہ جو لوگ اکثر مسکراتے چٹکلے سنتے سناتے اور ہنستے ہنساتے رہتے ہیں انھیں پریشانی بہت کم گھیرتی ہے۔ تو اب کی بار جب بھی آپ بے چینی اور مستقبل کے بارے میں خوف کا شکار ہونے لگیں تو کام چھوڑ کر کسی دلچسپ سے لطیفے یا واقعے کو یاد کریں۔ کسی اچھی وڈیو یا تصویری ویب سائٹ سے مزاحیہ تصاویر دیکھیں اور مسکرائیں۔

2- آنکھوں کو رنگوں سے تسکین دیں

غور کریں کہ آپ کو کس رنگ کو دیکھنا اچھا لگتا ہے۔ عام طور پر ہلکے رنگ کے شیڈز جیسے نیلے، سبز یا جامن رنگ انسانی نفسیات پر اچھا اثر ڈالتے ہیں۔ بہرحال آپ کو جو رنگ دیکھ کر اچھا محسوس ہوتا ہے اسے دیکھیں، کاغذ کو اسی رنگ سے رنگنا شروع کر دیں۔ اس سے آپ کے خیالات میں تروتازگی آ جائے گی۔ جو آپ کی بے چینی اور پریشانی کو حل کرنے میں مدد دے گی۔

3- پسندیدہ موسیقی سنئیے

اچھی موسیقی ہمارے موڈ پر براہ راست اچھا اثر ڈالتی ہے۔ اپنے دفتر یا گھر کے کمپیوٹر، لیپ ٹاپ یا سمارٹ فون میں اپنی پسند کے کچھ گانے رکھیں۔ بے چینی کے لمحات میں انھیں سنیں۔ یقین کریں روزانہ موسیقی سننے سے طبیعت میں غصہ کم اور برداشت زیادہ ہو جاتی ہے۔ ہاں ایک بات ضرور یاد رکھیں، اپنے موسیقی کے شوق میں دوسروں کو ہرگز پریشان نہ کریں اور ایک اچھا سا ہیڈ فون یا ہینڈ فری ساتھ رکھیں تا کہ کسی دوسرے کی آزادی کا حق متاثر نہ ہو۔

4- کچھ دیر کے لیے دنیا سے ناطہ توڑ لیں

بند کریں فون کو، انٹرنیٹ اور ٹی وی کو بھی۔ آرام سے کرسی پر دراز ہو جائیں اور خاموشی اختیار کر لیں۔ اگر ہو سکے تو موسم کے لحاظ سے ٹھنڈے یا گرم پانی سے کچھ دیر نہائیں۔ جسم تازہ دم ہو جائے تو خیالات بھی تازہ دم ہو جاتے ہیں۔ لیکن ہاں خود کو دنیا سے کچھ دیر کے الگ کرتے وقت یہ احتیاط ضرور کریں کہ کہیں اس وقت کسی کو آپ کی اشد ضرورت تو نہیں۔ کوئی ایسا تو نہیں جسے آپ کی وجہ سے تکلیف اٹھانا پڑے۔

5- خاموشی سے سانس لیں

آہستہ آہستہ لمبے لمبے سانس لینا دماغ اور دل کو تقویت دیتا ہے۔ ہمارے جسم میں زیادہ آکسیجن جاتی ہے اور ہمیں مسائل سے نمٹنے کے لیے زیادہ حوصلہ ملتا ہے۔ اگر آپ کو یوگا کی چند سادہ مشقیں معلوم ہیں تو وہ کر لیں۔ اس سے بھی بے چینی اور اضطراب میں کمی واقع ہو گی۔

6- وٹامن بی اور اومیگا۔تھری غذائیں لیں

وٹامن بی اور اومیگا تھری سے بھرپورکچھ غذائیں
وٹامن بی اور اومیگا تھری سے بھرپورکچھ غذائیں

پہلے پانچ باتیں فوری طور پر اضطرابی کیفیت سے نکلنے میں مدد دیں گی۔ لیکن لمبے عرصے کے لیے بے چینی (anxiety) سے نجات چاہتے ہیں تو وٹامن بی اور اومیگا۔تھری سے بھرپور غذائیں لیں۔ مچھلی، انڈے، مرغی کے گوشت، پالک، گاجر، میٹھے آلو، شملہ مرچوں اور دودھ میں یہ دونوں اجزا پائے جاتے ہیں۔ انھیں استعمال کرتے رہیں۔ خوش رہیں،موسیقی سنیں، تازہ ہوا میں لمبے لمبے سانس لیں، ہسنتے رہیں اور خوش رہیں۔ بس یہی زندگی ہے میرے دوست۔ جیو اور جی بھر کے جیو۔ کیونکہ جیون صرف ایک بار ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *